‘To Remain Silent is to Die’: Poetry as Resistance during the Zia Era

‘To Remain Silent is to Die’: Poetry as Resistance during the Zia Era

Maryam Mirza

There is a strange melancholy in reminiscing about Zia ul Haq’s era. Strange because I, as a mind and body, have not lived through it – yet the historical memory of the dictatorial regime remains omnipresent in almost every facet of the Pakistani experience – including the country’s artistic evolution. Despite massive wide scale suppression of resistant voices, the amount of literary, intellectual and artistic work that has recorded rebellion and censorship during the Zia era is unparalleled to another period in Pakistan’s history. Despite state active efforts to shun critical speech, it was through the words of brave and revolutionary writers that today the modern citizen recognises his governance as a crucial turning point in the country’s politics and social life. Continue reading “‘To Remain Silent is to Die’: Poetry as Resistance during the Zia Era”

مشال کے نام

مشال کے نام

عمار یاسر
ہمیں پکارو
ہمیں پکارو کہ ہم نے انساں کہ سرد لہجے میں صور پھونکا
ہمیں نے آدم کے خشک ہونٹوں کو تاب بخشی
ہمیں نے اپنے لہو سے سینچے ہیں کتنے صحرا
ہمیں نے اپنے بدن کے ٹکڑوں سے کتنے کرگس کے پیٹ پالے
ہمیں نے نمرود کی خدائی کو مات دی ہے
ہماری ہمت سے کتنے شاہوں کے قصر ٹوٹے
ہمیں نے کرب و بلا کے محشر میں ان گنت کو شکست دی ہے
ہمیں نے جز اس خدائے مطلق کے سب خداوں کو کفر جانا
ہمیں پکارو
ہمیں پکارو ہم ہرزماں میں تمہیں ملیں گے
کہیں پہ جب کوئی شور اٹھے صدائے حق کا
کوئی صلیبوں پہ مسکرائے
تم اپنے خلوت کدوں سے اٹھنا
اور اس صدا کی گواہی دینا
ہم سب زمینوں میں سب زماں میں تمہیں ملیں گے